اب غیر قانونی طریقے سے بارڈر پار کرنے کی کوئی ضرورت نہیں بڑے ملک نے پاکستانیوں کو 5 سالہ ویزہ دینے کا اعلان کر دیا

Date:

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) یونان کے وزیر برائے مائیگریشن اینڈ اسائلم مسٹر نوٹس میتراچی نے وزیر اعظم کے مشیر برائے سمندر پار پاکستانی ایوب آفریدی سے ان

کے دفتر میں ملاقات کی اور پاکستانیوں کے لیے قانونی ہجرت کے ذرائع کو فروغ دینے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا۔وفاقی وزیر نے کہا کہ یونان پاکستانیوں کی

قانونی امیگریشن کے لیے 2022میں نئی پالیسی بنانا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونان نے گزشتہ دو سالوں میں سخت بارڈر کنٹرول رکھا ہے اور غیر قانونی

امیگریشن کو کم کیا ہے۔ نئی پالیسی کا ہدف 5 سال کے لیے ویزا فراہم کرنا ہوگی، ہر سال تارکین وطن 9 ماہ یونان میں رہ سکیں گے اور باقی گھر واپس گزار سکیں نگے۔ پالیسی کے تین بڑے مقاصد قانونی ذرائع سے نئے ویزوں کا اجرائ، غیر قانونی تارکین وطن کو قانونی حیثیت دینا اور سمگلنگ اور غیر قانونی نقل مکانی کا خاتمہ کرنا ہے ۔ انہوں نے یہ بھی یقین دہانی کرائی کہ قانونی نقل مکانی سے پاکستان کی آمدنی میں اضافہ ہوگا اور یونان کے لیے براہ راست پروازوں کے لیے پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائن کو فروغ ملے گا۔وفاقی وزیر نے کہا کہ یونان میں 60 ہزار سے زائد رجسٹرڈ اور غیر رجسٹرڈ پاکستانی ہیں اور دونوں ممالک کی ہجرت کی ایک طویل تاریخ ہے اس لیے وہ باہمی جذبات کو سمجھتے ہیں۔ یونان میں یوکرین، البانیہ اور ترکی کی طرح یورپ کے اندر سے بھی تارکین وطن آئے ہیں۔ بدقسمتی

سے ماضی میں یونان اور پاکستان کے درمیان ہجرت کے حوالے سے مضبوط رابطہ نہیں تھا اور اسی وجہ سے یونان میں پاکستانی اس کی وجہ سے مشکلات کا شکار ہیں۔وزیر اعظم کے مشیر برائے سمندر پار پاکستانی نے وزیر کو بتایا کہ پاکستان ممالک کو ان کی مانگ کے مطابق خصوصی انسانی وسائل فراہم کرنے کے لیے ڈیٹا بیس بنا رہا ہے مزید برآں وزیراعظم عمران خان پاکستانی تارکین وطن کے لیے نرم قرضوں کی اسکیم کا آغاز کر رہے ہیں۔ مشیر نے کہا کہ سمگلنگ اور انسانی سمگلنگ دہشت گردی کی مالی معاونت اور منی لانڈرنگ کو بھی فروغ دیتی ہے جس کے خاتمے کے لیے پاکستان اس وقت جدوجہد کر رہا ہے۔ انہوں نے یونانی وزیر کو پاکستان میں سیاحتی صلاحیت سے بھی آگاہ کیا اور کہا کہ ملک یونانی سیاحوں کی میزبانی کے لیے تیار ہے۔وزیر برائے مائیگریشن اینڈ اسائلم نے کہا کہ پاکستان کے لیے قانونی ذرائع سے خصوصی انسانی وسائل فراہم کرکے ہجرت میں شراکت دار بننا ایک اچھا اقدام ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ایک کامیاب مائیگریشن پالیسی اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ یہ تارکین وطن ایک دن ملک واپس آئیں گے اور سرمایہ کاری واپس لائیں گے۔مضبوط مائیگریشن پالیسی کے لیے کوششیں جاری رکھنے کے لیے دونوں نمائندوں کے درمیان ارادے کے ایک اعلامیے پر دستخط کیے گئے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Share post:

spot_imgspot_img

Popular

More like this
Related

”جو لڑکی شوہر کے ہوتے ہوئے بھی غیر مردوں سے ناجائز تعلق رکھتی ہے“

کسی بھی عورت کے لئے ہرگز مناسب نہیں کہ...

جو عورت مرد کی ایک چیز چ و م لے

میاں بیوی میں سیکس کی شروعات ہمیشہ ہنسی مذاق...

ایک خط جو آپ کے لیے ہے

رابعہ میری بہت اچھی دوست ہے وہ ایک اولڈ...